Prevention of Copy Paste


  • تازہ اشاعتیں

    جمعرات، 31 دسمبر، 2015

    علم کائنات کی پیدائش

    علم کائنات کی پیدائش


    آئن سٹائن اس تصویر کا استعمال کرتے ہوئے بحیثیت مجموعی کائنات کو بیان کرنے کی کوشش کرتا تھا۔ اس بات سے بے خبر کہ اس کو بنٹلے کے اس تناقض کا سامنا کرنا ہوگا جسے صدیوں پہلے پیش کیا گیا  تھا۔ ١٩٢٠ء کی دہائی میں زیادہ تر ماہرین فلکیات اس بات پر یقین رکھتے تھے کہ کائنات یکساں اور ساکن ہے۔ لہٰذا آئن سٹائن نے شروع اس بات سے کیا کہ کائنات یکساں طور پر گرد و ستاروں سے بھری ہوئی ہے۔ ایک نمونے میں کائنات کو ایک بڑے غبارے یا بلبلے سے ملایا جا سکتا تھا۔ ہم غبارے کی سطح پر رہ رہے ہیں۔ ستارے اور کہکشائیں جو ہمارے ارد گرد ہیں ان کو غبارے کی سطح پر منقش نقطوں سے تشبیہ دی جا سکتی ہے۔

    اس کی توقعات کے برخلاف وہ جب بھی مساوات کو حل کرنے جاتا، تو اس کو کائنات متحرک نظر آتی۔ آئن سٹائن نے اسی مسئلہ کا سامنا کیا جس کو بنٹلے نے دو سو برس پہلے تشخیص کیا تھا۔ کیونکہ قوّت ثقل ہمیشہ سے کشش رکھتی ہے، اور کبھی دفع نہیں کرتی، ایک محدود ستاروں کے مجموعے کو منہدم ہوتے ہوئے ایک آگ کے گولے میں تبدیل ہونا چاہئے تھا۔ یہ بہرحال ابتدائی بیسویں صدی کی کائنات فہمی سے متصادم بات تھی جو کہتی تھی کہ کائنات یکساں اور ساکن ہے۔

    آئن سٹائن جیسا انقلابی اس بات پر یقین نہیں کر سکتا تھا کہ کائنات حرکت میں ہو سکتی ہے۔ نیوٹن اور دوسرے سائنس دانوں کے جم غفیر کی طرح آئن سٹائن بھی ساکن کائنات پر یقین رکھتا تھا۔ لہٰذا ١٩١٧ء میں آئن سٹائن مجبور ہوا کہ اپنی اس مساوات میں ایک نئی اصطلاح کو شامل کرے۔ ایک "من گھڑت عامل" جو ایک نئی طاقت کو اس نظریئے میں پیدا کرتا ہے یعنی کہ ضد ثقل جو ستاروں کو ایک دوسرے سے دور کرتی ہے۔ آئن سٹائن نے اس کو "کونیاتی مستقل" کا نام دیا۔ یہ ایک ایسا بدصورت چوزہ تھا جو آئن سٹائن کے نظریئے کو پیش کرنے کے بعد کا خیال تھا۔ آئن سٹائن نے پھر اس ضد ثقل کو قوّت ثقل کو زائل کرنے کے لئے خود ہی سے شامل کرلیا جس کے نتیجے میں کائنات ساکن ہو گئی۔ با الفاظ دیگر کائنات ایک حکم کے ذریعہ ساکن بن گئی تھی۔ قوّت ثقل کی وجہ سے کائنات کا اندرونی طرف سمٹاؤ  تاریک توانائی کے باہر طرف زور لگانے سے زائل ہو گیا تھا۔ (ستر برسوں تک، یہ ضد ثقل کی قوّت یتیم بنی رہی تاوقتیکہ پچھلے چند برسوں میں اس کو دریافت کیا گیا۔)

    ١٩١٧ء میں ولندیزی طبیعیات دان ویلم ڈی سٹر نے آئن سٹائن کے نظریئے کا ایک اور حل پیش کیا، جس میں کائنات لامحدود تو تھی لیکن مکمل طور پر مادّے سے خالی تھی۔ اصل میں وہ صرف توانائی پر مشتمل تھی (یعنی کہ کائناتی مستقل)جو خالی جگہ میں موجود تھا۔ یہ خالص ضد ثقل کی قوّت ہی اس قابل تھی کہ تیز اور برق رفتار کائنات کے پھیلاؤ کو جاری رکھے۔ بلکہ مادّے کے بغیر، یہ تاریک توانائی بھی پھیلتی ہوئی کائنات کو پیدا کر سکتی ہے۔

    طبیعیات دان اب ایک مخمصے کا سامنا کر رہے تھے۔ آئن سٹائن کی کائنات میں مادّہ تو تھا لیکن حرکت نہیں تھی، ڈی سٹر کی کائنات میں حرکت تھی لیکن کوئی مادّہ نہیں تھا۔ آئن سٹائن کی کائنات میں کائناتی مستقل لازمی تھا تاکہ قوّت ثقل کی کشش کو زائل کرکے ایک ساکن کائنات کو بنا سکے۔ جبکہ دی سٹر کی کائنات میں صرف کائناتی مستقل ہی پھیلتی ہوئی کائنات کو بنانے کے لئے کافی تھا۔

    ١٩١٩ء میں سائنس دانوں کی دو جماعتیں آئن سٹائن کی روشنی سے متعلق پیشن گوئی کی تصدیق کرنے کے لئے نکلیں۔ اس پیش گوئی میں کہا گیا تھا کہ دور دراز ستاروں کی روشنی جب سورج کو پار کرے گی تو وہ خم کھا جائے گی۔ لہٰذا سورج کی موجودگی میں ستارے کا محل وقوع اس کے عام محل وقوع سے دور حرکت کرتا ہوا نظر آئے گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ سورج نے اپنے ارد گرد مکان و زمان میں خم پیدا کیا ہوگا۔ لہٰذا قوّت ثقل "کھینچتی" نہیں ہے بلکہ "دھکیلتی " ہے۔

     بالآخر ١٩١٩ء میں جب یورپ جنگ عظیم اوّل کی خونریزی اور بربادی کے ملبے سے نکلنے کی سعی کر رہا تھا، تو ماہرین فلکیات کی ٹیموں کو پوری دنیا میں بھیجا گیا تاکہ وہ آئن سٹائن کے پیش کردہ نئے نظریئے کی جانچ کر سکیں۔ آئن سٹائن پہلے ہی یہ کہہ چکا تھا کہ سورج کا پیدا کردہ مکان و زمان کا خم اتنا ہوگا کہ وہ اپنے ارد گرد سے گزرنے والی ستاروں کی روشنی کو موڑ سکے۔ ستاروں کی روشنی کو سورج کے گرد درست اور قابل حساب طریقے سے خم کھانا چاہئے تھا بعینہ جیسے شیشہ روشنی کو موڑ دیتا ہے۔ لیکن کیونکہ دن میں سورج کی چمک ستاروں کی روشنی کو چھپا لیتی ہے لہٰذا سائنس دانوں کو سورج گرہن کا انتظار کرنا ہوگا تاکہ وہ اس فیصلہ کن تجربے کو کر سکیں۔

     ایک جماعت جس کی سربراہی فلکی طبیعیات دان آرتھر ایڈنگٹن کر رہے تھے اس کو خلیج گنی میں واقع جزیرہ پرنسیپی بھیجا گیا جو مشرقی افریقہ کے ساحل کے ساتھ ہے تاکہ وہ سورج کے گرد سے آتی ہوئی ستاروں کی روشنی کے خم کو اگلے سورج گرہن کے دوران ناپ سکیں۔ ایک اور ٹیم جس کی سربراہی اینڈریو کروملن کر رہے تھے وہ شمالی برازیل میں واقع سوبرال کی جانب روانہ ہو گئے تھے۔ جو اعداد و شمار انہوں نے حاصل کیے اس کے مطابق ستاروں کی روشنی کا اوسط انحراف 1.74 آرک سیکنڈ تھا جو آئن سٹائن کی 1.74 آرک سیکنڈ کی پیش گوئی (تجرباتی غلطی) کے اندر تھا۔

    بالفاظ دیگر روشنی سورج کے قریب خم کھا رہی تھی۔ ایڈنگٹن نے بعد میں اس بات کا دعویٰ کیا کہ آئن سٹائن کے نظریئے کی تصدیق کرنا اس کی زندگی کا سب سے یادگار لمحہ تھا۔
    ٦ نومبر ١٩١٩ء کورائل سوسائٹی اور رائل ایسٹرونومیکل سوسائٹی ان لندن کے ایک مشترکہ اجلاس میں نوبیل انعام یافتہ اور رائل سوسائٹی کے صدر جے جے تھامسن نے باضابطہ طور پر کہا کہ " یہ انسانی شعور ی تاریخ میں ایک عظیم کامیابی ہے۔ یہ دریافت کسی دورافتادہ جزیرے کی نہیں بلکہ نئے سائنسی خیالات کے پورے براعظم کی دریافت ہے۔ جب سے نیوٹن نے اپنے قواعد کا اعلان کیا تھا اس وقت سے لے کر اب تک کی یہ تجاذب سے متعلق عظیم دریافت ہے۔"

    (ایک قصّے کے مطابق، بعد میں ایک صحافی نے ایڈنگٹن کے پوچھا، "ایک خبر گردش کر رہی ہے کہ پوری دنیا میں صرف تین لوگ ہی آئن سٹائن کے نظریئے کو سمجھتے ہیں۔ یقینی طور پر آپ ان میں سے ایک ہوں گے۔" ایڈنگٹن خاموش رہا، لہٰذا صحافی نے کہا، "ایڈنگٹن اتنی منکسرالمزاجی مت دکھائیں۔" ایڈنگٹن نے کندھے اچکائے اور کہا،" بالکل بھی نہیں میں تو صرف یہ سوچ رہا ہوں کہ وہ تیسرا کون ہے۔")

    اگلے دن، لندن ٹائمز نے شہ سرخی لگائی، " سائنس میں انقلاب - کائنات کا نیا نظریہ - نیوٹن کا نظریہ پھینک دیا گیا۔" اس وقت جب آئن سٹائن دنیا کی ایک نامی گرامی شخصیت بن گیا تھا اس وقت اخبار کی شہ سرخی تھی، "ستاروں کا پیام بر۔" یہ اعلان نا صرف اہم تھا بلکہ اس میں آئن سٹائن نے بنیادی طور پر نیوٹن سے انحراف کیا تھا جس کی وجہ سے اس نے نمایاں رد عمل پیدا کیا۔ کئی ممتاز ماہرین طبیعیات اور ماہرین فلکیات نے اس نظریئے کی اعلانیہ مخالفت کی۔ کولمبیا یونیورسٹی کے چارلس لین پوور، جو سماوی میکانیات کے پروفیسر تھے وہ اضافیت پر تنقید کرنے میں پیش پیش تھے انہوں نے کہا" مجھے ایسا لگ رہا ہے جیسا کہ میں کسی طلسماتی دنیا میں گھوم رہا ہوں اور کسی جادوگر کے ساتھ چائے پی رہا ہوں۔"


    ہمارے فہم و ادراک میں اضافیت کا آنا اس کے غلط ہونے کی وجہ نہیں ہے، اصل میں مسئلہ یہ ہے کہ ہماری فہم عامہ حقیقت کی نمائندہ نہیں ہے۔ ہم کائنات میں منفرد ہیں۔ ہم ایک غیر معمولی قطعہ زمین کے باسی ہیں جہاں حرارت، کثافت اور سمتی رفتار بہت ہی مناسب ہیں۔ بہرحال "اصل کائنات" میں درجہ حرارت ستاروں کے قلب میں جھلسا دینے والا ہوتا ہے یا پھر خلائے بسیط میں سن کر دینے والی سردی ہوتی ہے۔ اور ذیلی جوہری ذرّات تمام خلاء میں روشنی کر رفتار سے محو سفر رہتے ہیں۔ بالفاظ دیگر ہماری عقل سلیم ایک ایسے ماحول میں پلی ہے جو کائنات میں انتہائی غیر معمولی اور مخفی جگہ یعنی کہ زمین پر موجود ہے۔ لہٰذا اس بات میں کوئی حیرانی کی بات نہیں ہے کہ ہماری عقل سلیم سچی کائنات کو سمجھنے سے قاصر رہتی ہے۔ مسئلہ اضافیت میں نہیں بلکہ اپنے فہم کو حقیقت سمجھنے میں ہے۔
    • بلاگر میں تبصرے
    • فیس بک پر تبصرے

    0 comments:

    Item Reviewed: علم کائنات کی پیدائش Rating: 5 Reviewed By: Zuhair Abbas
    Scroll to Top