Prevention of Copy Paste


  • تازہ اشاعتیں

    جمعہ, ستمبر 16, 2016

    ایک پراسرار کائناتی کہانی: آغاز - حصّہ ہفتم



    ٹائپ la نوتارا کہلانے ولے یہ ایک مخصوص قسم کے پھٹتے ہوئے ستارے ہیں جن کو 1990ء کے عشرے میں احتیاط کے ساتھ کی گئی تحقیق میں دیکھا گیا جن کی غیر معمولی خاصیت تھی: زیادہ درستگی کے ساتھ، یہ ٹائپ la جو جبلی طور پر روشن ہوتے ہیں طویل عرصے تک چمکتے ہیں۔ اگرچہ نظریاتی طور پر اس کا باہمی ربط مکمل طور پر نہیں سمجھا گیا تاہم تجربی طور پر بہت قریب ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ یہ نوتارے بہت ہی اچھی "معیاری شمعیں "ہیں۔ اس سے ہمارا یہ مطلب ہوتا ہے کہ یہ نوتارے فاصلوں کی پیمائش کے لئے استعمال ہو سکتے ہیں کیونکہ ان کی جبلی چمک براہ راست پیمائش سے دریافت شدہ ان کے فاصلے پر منحصر ہے۔ اگر ہم ایک نوتارے کو دور دراز کی کہکشاں میں دیکھتے ہیں اور ہم دیکھ سکتے ہیں کیونکہ وہ بہت زیادہ روشن ہوتے ہیں - تب ہم یہ دیکھ کر کہ وہ کتنا عرصہ چمکتے ہیں، ان کی جبلی چمک کو اخذ کر سکتے ہیں۔ اس کے بعد اپنی دوربینوں سے اس کی ظاہری چمک کی پیمائش کر کے ہم درست طور پر اخذ کر سکتے ہیں کہ نوتارا اور اس کی میزبان کہکشاں کتنی دور ہے۔ اس کے بعد کہکشاں میں موجود ستارے کی روشنی کی "سرخ منتقلی" کی پیمائش کر کے ہم اس کی سمتی رفتار کا تعین کر سکتے ہیں، اور اس طرح سمتی رفتار کا تقابل فاصلے سے کر کے کائنات کے پھیلاؤ کی شرح کو اخذ کرتے ہیں۔ 

    ابھی تک تو اچھا ہے، تاہم اگر نوتارا ہر سو برس یا اسی طرح کے عرصے میں ایک کہکشاں میں ایک مرتبہ پھٹتا ہے، تو اس کو ہمارے کبھی بھی دیکھنے کا امکان کتنا ہے ؟ بہرحال ہماری اپنی کہکشاں میں دیکھا جانے والا زمین پر آخری نوتارا جوہانس کیپلر نے 1604ء میں دیکھا تھا! اصل میں یہ کہا جاتا ہے کہ ہماری کہکشاں میں دیکھے جانے والے نوتارے صرف کسی عظیم ماہر فلکیات کی زندگی کے دوران ہی دیکھے جاتے ہیں، اور یقینی طور پر کیپلر اس پر پورا اترتا تھا۔ 

    آسٹریا میں ایک منکسر المزاج ریاضی کے معلم کے شروعات کرنے کے بعد کیپلر فلکیات دان ٹائیکو براہی (جس نے خود سے ہماری کہکشاں میں ایک اور پہلے نوتارے کا مشاہدہ کیا تھا اور بدلے میں ڈنمارک کے بادشاہ نے اس کو پورا جزیرہ عطا کیا تھا) کا ماتحت بنا، اور ایک دہائی سے زیادہ عرصے میں لئے جانے والے آسمان پر سیاروں کے مقام کا براہی کے اعدادوشمار کا استعمال کر کے، کیپلر نے اپنے مشہور زمانہ سیاروی حرکت کے قوانین کو سترویں صدی میں اخذ کیا: 

    1۔ سیارے سورج کے گرد بیضوی صورت میں چکر لگاتے ہیں۔ 

    2۔ سیارے اور سورج کے درمیان ایک منسلک خط وقت کے برابر وقفوں کے درمیان برابر ہوتا ہے۔ 

    3۔ سیارے کے مداری مدت کا جذر المربع براہ راست اس کے مدار کے جزوی-اہم محور (یا دوسرے الفاظ میں بیضوی کا "جزوی-اہم محور"، بیضوی کے سب سے چوڑے حصّے کے فاصلے کے نصف) کے مکعب (تیسری قوت) سے متناسب ہوتا ہے۔ 

    ان قوانین نے لگ بھگ ایک صدی کے بعد نیوٹن کے کشش ثقل کے قوانین کو اخذ کرنے کی بنیاد ڈالی۔ اس شاندار شراکت کے علاوہ، کیپلر نے کامیابی کے ساتھ اپنی ماں کا جادوگری کے مقدمے میں دفاع کیا اور وہ چیز لکھی جو شاید پہلا سائنسی قصہ تھا، چاند کے سفر کی کہانی۔ 

    آج کل، نوتارے کو دیکھنے کا ایک سادہ طریقہ یہ ہے کہ مختلف تحصیل علم میں مصروف طالبعلموں کو آسمان میں ہر کہکشاں دے دی جائے۔ بہرحال ایک سو برس کچھ زیادہ الگ نہیں ہیں، کم از کم کائناتی لحاظ سے ایک پی ایچ ڈی کرنے کے لئے درکار اوسط وقت کے لئے تو بالکل بھی نہیں، اور سند حاصل کرنے والے طالبعلم سستے اور کثرت سے ہیں۔ بخوشی، بہرحال، ہمیں رسائی کے لئے اس طرح کے شدید اقدامات کی ضرورت نہیں ہے، بہت ہی سادہ وجہ ہے : کائنات بڑی اور پرانی ہے، نتیجتاً، نایاب واقعات ہر وقت ہوتے رہتے ہیں۔ 

    کسی رات کو جنگل یا صحرا میں جائیں جہاں آپ ستارے دیکھ سکیں اور اپنے ہاتھ آسمان کی طرف اٹھائیں، اپنی انگوٹھے اور شہادت کی انگلی کے درمیان ایک ننھا سا دائرہ ایک سکے جتنا بنائیں۔ اس کو اس تاریک حصّے پر رکھیں جہان بظاہر کوئی ستارہ نہ ہو۔ تاریک پٹی پر ایک کافی بڑی اس قسم کی دوربین جو آج ہمارے پاس موجود ہے آپ لگ بھگ 100,000 کہکشاؤں کو دیکھ سکتے ہیں، جس میں سے ہر ایک میں ارب ہا ستارے موجود ہیں۔ کیونکہ نوتارا سو برس میں ایک مرتبہ پھٹتا ہے، 100,000 کہکشاؤں کو دیکھنے کے ساتھ، آپ امید کر سکتے ہیں کہ اوسطاً لگ بھگ تین ستارے ایک دن میں پھٹتے ہیں۔ 

    ماہر فلکیات صرف یہ کرتے ہیں۔ وہ دوربین کے لئے وقت مانگتے ہیں، اور کسی رات وہ ایک ستارے کو پھٹتے ہوئے دیکھ سکتے ہیں، کسی رات دو کو، اور کسی رات کو جب رات ابر آلود ہو تو وہ کوئی بھی نہیں دیکھ سکتے۔ اس طرح سے کئی جماعتیں ہبل کے مستقل کو 10 فیصد غیر یقینی سے کم کے ساتھ تعین کرنے کے قابل ہو گئیں۔ نیا عدد، کہکشاؤں کے لئے اوسطاً ہر 30 لاکھ نوری برس دور 70 کلومیٹر فی سیکنڈ، لگ بھگ ہبل اور ہماسن کے اخذ کردہ عدد سے 10 گنا چھوٹا ہے۔ نتیجتاً ہم کائنات کی عمر کو 1.5 ارب برس کے بجائے 13 ارب برس کا اخذ کرتے ہیں۔ جیسا کہ میں بعد میں وضاحت کروں گا کہ یہ مکمل طور پر ہماری کہکشاں میں پرانے ترین ستاروں کی عمر کے آزاد تخمینہ جات سے مطابقت رکھتی ہے۔ 



    براہی سے کیپلر تک، لیمیترے سے آئن سٹائن اور ہبل تک، اور ستاروں کے طیف سے لے کر ہلکے ترین عناصر کی کثرت تک، جدید سائنس کے چار سو برسوں نے پھیلتی کائنات کی شاندار اور مسلسل تصویر بنائی ہے۔ ہر چیز ایک ساتھ ملتی ہے۔ بگ بینگ کی صورت اچھی حالت میں ہے۔
    • بلاگر میں تبصرے
    • فیس بک پر تبصرے

    0 comments:

    Item Reviewed: ایک پراسرار کائناتی کہانی: آغاز - حصّہ ہفتم Rating: 5 Reviewed By: Zuhair Abbas
    Scroll to Top